جی آر جونیجو
تھرپارکر کے گاؤں دلن جو تڑ کے سمیجہ محلہ میں پرائمری اسکول قائم ھے جس میں اس وقت  97 بچے زیر تعلیم ھیں اس اسکول کی  عمارت 1988 میں بنی جو دو کمروں پر مشتمل تھی اس  عمارت بننے کو 32 سال گذر گئے ھیں مگر ابھی تک اس اسکول کی بننے کے بعد ایک مرتبہ بھی رپیئرنگ نہیں ھوئی ھے جس کے باعث اسکول کی عمارت زبون حالی کا شکار ھو گئی ھے۔
اسکول کی دیواریں اور چھتیں ناقص ھو گئی ھیں اور انہین کسی بھی وقت گرنے کا خدشہ موجود رھتا ھے جس سے شاگرد پریشانی کا شکار رھتے ھیں اور اسکول کی عمارت کے باھر کھلے آسمان تلے تعلیم حاصل کرنے پر مجبور ھیں۔
گاؤں باسیوں نے بار بار شکایت کی ھے مگر تھر کی انتظامیہ ان کی سننے کے لیئے تیار ھیں نہین ھے ایک طرف تھر کئی اسکولوں کی عمارتیں وڈیروں کی اوطاقوں میں تبدیل ایسے ھی وقت ایک چلتے اسکول کی عمارت نہ ھونے سے مستقبل کے معمار انتہائی مشکلات میں تعلیم حاصل کر رھے ھیں.
گاؤں باسیوں نے مطالبہ کیا ھے کہ اسکول کی عمارت کے نۓ سر تعمیر کی جاۓ تاکہ بچے آسانی سے تعلیم حاصل کر سکیں۔

LEAVE A REPLY