By GR Junejo
آج پوری دنیا میں  بچوں کا دن منایا جا رھا ھے مگر تھرپارکر کے بچے آج بھی بنیادی سہولتوں اور تعلیم کے حق  سے  محروم ھیں۔ تھرپارکر میں بچوں کی تعلیم حاصل کرنے کے لیۓ بھی محدود وسائل ھیں 17 لاکھ آبادی والے تھرپارکر ضلعے  کے دو لاکھ بچے آج بھی تعلیم حاصل کرنے سے محروم ھیں اور اسکولوں  سے باھر ھیں۔
تهرپارکر کے 4100 اسکولوں میں سے 900 اسکولز آج بھی بند ھیں۔
 
 تھرپارکر کے سات تحصیلوں مٹھی، ڈیپلو،اسلامکوٹ،ننگرپارکر،چھاچھرو،ڈاهلی اور کلوئی کے دیہات ۾ 4202اسکول ھیں جس میں پرائمری اسکول 3920،مڈل اسکول 233،هاءِ اسکول 49 ھیں ،ایک سماجی ادارے کے سروے مطابق تھر میں 140 اسکول چھت کے بغیر ھیں جب کہ 840 اسکولوں کو عارضی طور پر بند کردیا ھے  تھرپارکر میں تعلیم حاصل کرنے والے بچوں میں سے 38 فیصد گرلس اور 57 فیصد لڑکے ھیں۔ اور تھر میں اسکولوں سے باھر بچوں کی تعداد دو لاکھ ھے تھرپارکر کے ،ٹوٹل  49 هاۓ  اسکولوں میں سے صرف  16 اسکولوں میں سائنس لیب ھیں ،77 پرنٹ  اسکولوں میں  بجلی کی سهوليت موجود نہیں ھے ،85 فیصد  اسکولوں میں پینے کے پانی کی سہولیات موجود نہیں ھے،63 فیصد اسکولوں کو بائونڈری وال نہیں ھے ،67 فیصد  اسکولوں میں واش روم کی سھولیت نہیں ھے۔
 
بچوں کے عالمی دن پر تھر کے والدیں نے حکمران وقت سے اپنے بچوں کو تعلیم کا بنیادی حق دینے کا مطالبہ کیا ھے

LEAVE A REPLY