رفیق چاکر
پاک وائسز، پنجگور
رخشان ندی پل تقریبا پچاس فیصد کام ہو چکا تھا لیکن اس پر چار سال سے کام روک دیا گیا ہے۔
پنجگور میں دو انتخابی حلقوں اور کئی اہم شہروں کو ملانے والی رخشان ندی پنجگور کے عین وسط میں واقع ہے. ضلع میں تقریبا 24 یونین کونسلیں ہیں جن میں آنے والےعلاقوں کے درمیان سے ندی گزرتی ہے۔ اسی لیے یہ ندی بہت سے علاقوں کو ایک دوسرے سے ملانے میں اہم کردار ادا کرتی ہے۔
پنجگور صوبائی اسمبلی کی دو نشستوں یعنی پی بی 42اور پی بی 43کو تقسیم کرنے میں بھی رخشان ندی کا ایک اہم کردار ہے۔ندی کے ایک جانب ایک انتخابی حلقہ اور دوسری جانب دوسرا حلقہ ہے۔
رخشان ندی پر پل بنانے کے منصوبے کی سائیٹ پر آج بھی تعمیراتی مٹریل موجود ہے۔
رخشان ندی کو پار کرنے کا واحد زریعہ رخشان پُل ہے جس کے زریعے لوگ پنجگور کے مختلف علاقوں سے چتکان بازار آتے ہیں۔
یہ پل 2012میں تعمیر کیا گیا لیکن صرف پانچ سالوں کے دوران آج پل ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہے۔ اس کے علاوہ کئی شہروں کو اس پل تک رسائی نہیں حاصل تھی۔
صوبائی حکومت نے رخشان ندی پر ایک نیا پُل بنانے کی منظوری دے دی دی اور اس پر کام کا آغاز کردیا گیا لیکن پچاس فیصد
کام کے بعد منصوبہ پر کام روک دیا گیا۔
اس پل کی تعمیر سے ضلع بھر کے عوام کا کئی گھنٹوں کا سفر خاصا کم ہو جاتا۔
خدابادان کے شہری نادر حسین نے پاک وائسز سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ علاقے کے عوام کو بارش کی صورت میں مشکلات کا سامنا کرنا پڑتا ہے اور چتکان پہنچنے کے لیے طویل مسافت کرنی پڑتی ہے۔
 “اگر اس پروجیکٹ کو مکمل کردیا جائے تو اکثر شہروں کے رہائشیوں کو چتکان آنے جانے میں آسانی ہوگی۔”
تسپ کے شہری فضل کریم نے پاک وائسز سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ 4 سال قبل علاقے میں امن و امان کی ابتر صورتحال کے پیش نظر منصوبے پر کام روک دیا گیا جو آج تک دوبارہ شروع نہیں ہوسکا۔
پروجیکٹ ٹھیکدار کے مطابق  منصوبہ پر 2013 کے ریٹ پر کام کرنا ممکن نہیں ہے۔
 “اگر اس پُل کو مکمل کر لیا جائے تو اکثر علاقوں کے رہائشی کم وقت میں چتکان بازار پہنچ سکتے ہیں۔”
منصوبے کو ادھورا چھوڑنے کے حوالے سے ٹھیکہ دار ماجد بلوچ نے پاک وائسز سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ پروجیکٹ پرکام اپنی تکمیل کے آخری مرحلے میں داخل ہو چکا تھا کہ علاقے میں امن و امن کی خراب صورتحال کے باعث کام چھوڑنا پڑا۔
“اب تعمیراتی میٹریل مہنگا ہونے کے باعث 2013 کے ریٹ پر منصوبے کو مکمل نہیں کیا جا سکتا۔”
رائیٹر کے بارے میں:رفیق چاکر پاک وائسز کے لیے پنجگور سے بطور سٹیزن جرنلسٹ کام کر رہے ہیں۔

LEAVE A REPLY