برکت اللہ بلوچ ، گوادر 


زرائع آمد ورفت کی جو ابتر صورت حال ضلع گوادر میں نظرآتی ہے شاید کسی اور علاقے کے انفرسٹرکچر کی ایسی حالت ہو۔

گوادر کے دیہی علاقے اس سلسلے میں سب سے زیادہ متاثر نظرآتے ہیں جس کے سبب لوگوں کو آمدورفت میں انتہائی پریشانی کا سامنا کرنا پڑرہا ہے۔عوام کی اسی پریشانی کو  دیکھتے ہوئے گوادر کے نواحی علاقہ کلانچ کے ایک نوجوان امان اللہ بلوچ کئی سالوں سے ان سڑکوں کی بحالی اور مرمت کے لئے اپنی مدد آپ کے تحت سرگرم عمل ہیں۔

امان اللہ بلوچ ایک ٹرانسپورٹر ہے اور علاقے میں سماجی خدمات کے حوالے سے اپنی ایک پہچان رکھتے ہیں۔ پاک وائسزز سے گفتگو کرتےہوئے ان کا کہنا تھا کہ کہ کلانچ کا علاقہ گوادر کا ایک اہم اور وسیع علاقہ ہے لیکن کلانچ میں زرائع آمدورفت کی سہولت نہ ہونے کے برابر ہے۔

کوسٹل ہائی سے متصل ہونے کے باوجود سڑکوں کی حالت زار انتہائی خراب ہے۔اس وقت ضلع گوادر میں پانی کا شدید بحران ہے جہاں ٹینکروں کے زریعے دیہی علاقوں میں پانی سپلائی کیا جارہا ہے لیکن سڑکوں کی خستہ حالی کے سبب ٹینکروں کا علاقوں میں پہنچنا ناممکن ہے اور لوگ نقل مکانی کرنے پر مجبور نظر آتے ہیں۔

لوگوں کی اس حالت زار کو دیکھ کر امان اللہ نے کلانچ کے متاثرہ علاقوں “بل مولداد بازار”، “ہڈکی مچانی بازار” اور “ہڈکی مبارک بازار” کی لنک سڑکوں کی مرمت کا کام شروع کیا ہے اور ان میں سے ہر سڑک چار کلومیٹر سے زائد لمبائی پر مشتمل ہےاور اس وقت مذکورہ تمام لنک سڑکوں کی مرمت کا کام مکمل ہوچکا ہے اور لوگوں کو آمد ورفت میں کسی بھی قسم کی پریشانی کا سامنا نہیں کرنا پڑرہا ہے۔

امان اللہ کے مطابق ان سڑکوں کی مرمت اور بحالی کے کام میں انہوں نے  تمام اخراجات خود برداشت کیے ہیں۔

امان اللہ بلوچ کا مزید کہنا تھا کہ “کلانچ مین روڈ کی تعمیر کے لیے گزشتہ حکومت کی جانب سے پیسے بھی ریلیز ہوئے تھے لیکن وہ پیسے خرچ نہیں کئے گئے۔”

انہوں نے کہا کہ کلانچ کےعلاقوں میں سڑکوں کو قابل استعمال بنانے کے لئے وہ کئی سالوں سے سرگرم عمل ہیں لنک سڑکوں کے علاوہ وہ مین کلانچ روڑ اور کوسٹل ہائی وے پر موجود ناقابل استعمال پل کے متبادل سڑک پر بھی اپنی مدد   آپ  کے تحت بحالی اور مرمت کا کام کرچکے ہیں۔

رائیٹر کے بارے میں: برکت اللہ بلوچ پاک وائسز کے ساتھ  بطور سٹیزن جرنلسٹ گوادر شہر سے کام کرتے ہیں۔

LEAVE A REPLY