سلیمان ہاشم
گوادر۔
گوادر میں پاک وائسز کے انفارمیشن سینٹر میں آج یوم آزادی صحافت کے مناسبت سے ایک تقریب منعقد کی گئی
جس میں مقامی صحافیوں نے شرکت کی۔
 
اس موقع پر صحافیوں سے خطاب کرتے ہوئے گوادر پریس کلب کے سینئر صحافی اسماعیل بلوچ نے پاک وائسز
کے سٹیزن جرنلسٹ نیٹ ورک کی جانب سے مقامی مسائل کو اجاگر کرنے کی کوششوں کو سراہا۔
انہوں نے مزید کہا کہ بلوچستان کے صحافیوں کو نہ صرف حکومتی دھمکیاں ملتی رہی ہیں بلکہ بلوچ مزاحمت کاروں کی طرف سے مستقل نشانے پر ہیں۔ “میں یہ کہتا ہوں کہ گوادر کا صحافی ہر طرف سے خطرات میں ہے۔”
 
انہوں نے آزادی صحافت کے لیے صحافیوں کی قربانیوں اور جدوجہد کا تذکرہ کرتے ہوئے کہا کہ آزادی صحافت کی تحریک کو صحافیوں نے جان ہتھیلی پر رکھ کر زندہ رکھا ہے۔
 
تقریب میں فری لانس کام کرنے والے صحافیوں کی مشکلات کا بھی زکر کیا گیا۔
 
اس موقع پر پاک وائسزکے سٹیزن جرنلسٹ برکت اللہ بلوچ نے مقامی صحافیوں کی شرکت کا خیر مقدم کرتے ہوئے کہا کہ صحافی تمام تر مشکلات اور چیلنجز کے باوجود گوادر کے عام آدمی کے مسائل کو اجاگر کرنے میں اپنا کردار ادا کر رہے ہیں۔
 
انہوں نے پاک وائسز کی جانب سے گوادر میں انفارمیشن سینٹر کے قیام سے شہری صحافی مستفید ہوں گے۔ انہوں نے کہا کہ پاک وائسز کے نیٹ ورک نے مختصر سے عرصے میں اپنی غیر جانبدرانہ رپورٹنگ سے اپنا مقام بنا لیا ہے۔

LEAVE A REPLY