بالاچ قادر
پاک وائسز، گوادر 
طلبا کو وہ تمام جدید سہولیات فراہم کی گئیں ہیں جو کسی بھی ماڈرن اسکول میں ہونی چاہیے۔
گوادر میں “زِر پبلک اسکول” کے نام سے ایک ایسے نجی اسکول کا قیام عمل میں لایا گیا ہے جس کا مشن شہر کے ہر بچے کو تعلیم کے یکساں مواقع فراہم کرنا ہے۔
 اس کا سہرا گوادر کے ایک استاد نواز بلوچ کو جاتا ہے جو اس پروجیکٹ کو عملی جامہ پہنانے کے لیے کافی عرصے سے کوشاں تھے۔ جب وہ خود اسکول میں زیر تعلیم تھے تو ان کے علاقے میں ایسا ایک بھی ماڈرن اسکول نہیں تھا۔
اسکول کے بانی نے گوادر میں بچوں کی میعاری تعلیم کے لیے سوچتے ہوئے ایسا قدم اٹھایا جسے کمیونٹی کے لوگوں نے سپورٹ کیا اور کامیاب بنایا۔ گوادر کے بچے بڑے شہروں میں جا کر تعلیم حاصل کرنے پر مجبور تھے لیکن اب انہیں کہی اور جانے کی ضرورت نہیں پڑے گی۔
اسکول کے بانی نواز بلوچ
نواز بلوچ نے پاک وائسز سے بات چیت کرتے ہوئے اپنے اسکول پروجیکٹ کی کہانی سناتے ہوئے بتایا کہ “اسکول کے قیام کا مقصد گوادر کے غریب اور نادار بچوں اور بچیوں کو جدید اور معیاری تعلیم کی مفت فراہمی کو ممکن بنانا ہے”
انہوں نے کہا کہ “میں نے گوادر میں ایسے اسکول کے قیام کے لیے 2009میں اپنے دوستوں کے ساتھ مل کر ملکر جدوجہد شروع کی اور آج اپنے مقصد میں کامیاب ہوا ہو۔”
انہوں نے مزید کہا ” اسکول بنانے کے لیے گوادر کے مخیر حضرات نے مالی مدد کی جس سے طلبا کے لیے اسکول یونیفارم، کتابیں اور دیگر ضروری اشیا خریدی گئیں ہیں۔ “
اسکول میں معیاری تعلیم کی فراہمی یقینی بنانے کے لیےاسکول میں کمپیوٹرلیب اور ملٹی میڈیا سمیت جدید سہولیات فراہم کی گئیں ہیں۔
نواز بلوچ نے اسکول میں داخلے کے حوالے سے بتایا کہ “اسکول میں ہماری توقعات سے بڑھ کر بچوں نے دلچسپی ظاہر کی ہے جن کی تعداد سینکڑوں میں ہے جبکہ اس وقت 250بچوں کو اسکول میں داخلہ دیا گیا ہے۔
رائیٹر کے بارے میں: بالاچ قادر پاک وائسز کے لیے گوادر سے بطور سٹیزن جرنلسٹ کام کرتے ہیں۔ 

LEAVE A REPLY